Baask- Home of Balochi Language, Literature & Culture

Non-Baluchi Litrature در بلوچی زبانانی ادب => ھندی / اردو Urdu / Hindi => باسکانی دیوان کے اُردو شعراء اور لکھاری => Topic started by: hafiz_aaskani1 on January 05, 2013, 12:09:34 PM

Title: یہ راہِ عشق بھی عطا عجیب پیچدار ہے
Post by: hafiz_aaskani1 on January 05, 2013, 12:09:34 PM


ایک ادنی کاوش آپکی خدمت میں پیش کر رہا ہوں مصلحین سے یہی امید ہے کہ میری رہنمائی فرمائیں گے

عجب   سا  اک  سکوں   یہاں ،  قرار ہی  قرار  ہے
یہ   تربتِ   امیدِ  دل ، یہ   شوق   کا   مزار    ہے

ظہور  تجھ  سے  کیسے  ہو  جنوں  کے  معجزات کا
تجھے   تو  اپنے  نفس  پر   ابھی   تک  اختیار  ہے

بس  اک  نگاہ  ڈال  کر   مری  طرف   یوں  چل  دیا
کہ  جیسے  وہ نہ جانے  مجھ  کو  کس  کا انتظار ہے

نگاہِ خلق  کی زباں  تو   کہہ   رہی  ہے   اور   کچھ
سنا   تھا   میرے   شہر   میں   بہار   ہی   بہار  ہے

گلوں   پہ   چھائی   مردنی  ،  صبا کنارہ   کش  یہاں
یہ   خوف  کا   دیار  ہے  ،  یہ  میرا   لالہ  زار ہے

عروج    پر   ہے   آجکل   شبِ    سیہ   کی   تیرگی
کہ   جیسے   ہر  ستارے   پر  حجاب   زلفِ  یار  ہے

ہزارہا    قیامتوں   نے    کی   تھیں    رخنہ   سازیاں
مگر  یہ  شوقِ  وصل   بھی    بلا  کا    پائیدار   ہے

مرا  طواف  انکا  گھر ! ، جہاں  کو  اعتراض   کیوں؟
میں  بھی  ہوں  خلقتِ  خدا  مرا   بھی  اک   مدار  ہے

گئے  تھے ان کو ڈھونڈنے تو خود  کو کھو کے رہ گئے
یہ   راہِ   عشق    بھی   عطا    عجیب   پیچدار   ہے

                                                                                             (حافظ عطا آسکانی)