Author Topic: وجودِ کربِ مسلسل کو جاں میں رکھا ہے  (Read 1605 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Amjad Qarar

  • Baask Poet
  • ***
  • Posts: 96
  • Karma: 6
وجودِ کربِ مسلسل کو جاں میں رکھا ہے
                                بس ایک موڑ ابھی داستاں میں رکھا ہے


اسی  کا  فیض  ستاروں  کی مانگ بھر دے گا
وہ  اک  دیا  جو تہہِ  خاکداں  میں  رکھا  ہے

چہا ر سمت  سے خوشبو کا رقص  جاری  ہے
تمہاری لمس  کو ایسے  دھیاں  میں  رکھا ہے

اس ہاتھ بھر کی  جدائی  کا  کون  رنج  کرے
سوادِ    گردِ   انا  درمیاں   میں   رکھا  ہے

یہ  سیلِ  دوراں  مجھے  غرق  کرچکا  ہوتا
مجھے تو ماں کی دعا نے اماں میں رکھا ہے

یہاں  پہ  ہجرِ  مسلسل، وہاں  پہ  قرب   سدا
ہمیں  خدا نے عجب امتحاں  میں  رکھا  ہے

Offline Imraan saaqib

  • Baask Poet
  • ***
  • Posts: 166
  • Karma: 22
Re: وجودِ کربِ مسلسل کو جاں میں رکھا ہے
« Reply #1 on: May 23, 2010, 01:20:10 PM »
Nafeeeeees!!