Author Topic: صدیاں ہم سے پوچھتی ہیں  (Read 1508 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Amjad Qarar

  • Baask Poet
  • ***
  • Posts: 96
  • Karma: 6
صدیاں ہم سے پوچھتی ہیں
« on: May 08, 2010, 01:24:29 AM »
صدیاں ہم سے پوچھتی ہیں
سچ اب جو نہیں، کب بولوگے
احساسِ گناہ کی آنکھوں سے
کب اشکِ ندامت رو لو گے

اس بانج فضا کے ساۓ میں
الفاظ کی حرمت بکتی ہے
تسکینِ شکم کی خواہش میں
صدیوں کی اطاعت بکتی ہے
خوشبو سے تعلق کے مجرم
پھولوں کی نزاکت بکتی ہے
یاں بھوکے ننگے بچوں کی
احساسِ شرارت بکتی ہے
ماؤں کی دواؤں کی خاطر
بیٹوں کی شرافت بکتی ہے
ہر سمت لہو کے چھینٹے ہیں
ہر گھر میں شھادت بکتی ہے
بے درد مسیحا کے در پر
قسطوں میں شفاعت بکتی ہے

اس زیور و زر کے پلڑے میں
کیا ہر شے یوں ہی تو لو گے

صدیاں ہم سے پوچھتی ہیں
سچ اب جو نہیں کب بولو گے؟؟؟



  نامکمل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Offline Imraan saaqib

  • Baask Poet
  • ***
  • Posts: 166
  • Karma: 22
Re: صدیاں ہم سے پوچھتی ہیں
« Reply #1 on: May 23, 2010, 01:27:29 PM »
is ko kehtay hain sachi aur Achi shaairi!! (y)
salamat raho QaraaR.........

QaraaaR Le kay Tere Dar se BeQaraaR chale!!! :)

Tai brat o paristar
I.saqiB