Author Topic: "فصلِ اُمید"  (Read 1483 times)

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

Offline Imtiaz Irani

  • Junior Baask
  • **
  • Posts: 56
  • Karma: 8
  • Mani dideag o saa o goman toay.
"فصلِ اُمید"
« on: October 11, 2012, 04:11:32 AM »
"فصلِ اُمید"

یہ زندگی کا عجیب سفر ہے
نہ کوئی خضر ہے نہ کوئی رہبر
رستہ گرد سے اٹا ہے
اور دھول اُڑ رہی ہے
پر خطر رستہ ۔۔۔۔
اور سنگلاخ چٹانیں ۔۔۔۔
جن پہ چل چل کہ ،
گھرے زخم ملے ہیں
بے بسی اور بے رخی سہی ہے
ااک خوشی کے بدلے سود میں ۔۔۔
کہیں غم اور رنجشیں اٹھائی ہیں ۔۔۔۔
آخر یہ ستم ۔۔۔ کب تک؟
یہ گہرا غم کب تک؟
یہ اندھیرا کب تک ؟
اور سویرا؟
سویرا کب ہو گا؟
اِس سفر کی منزل کہاں ہے ؟
اور کب ملے گی؟
انجام سفر کیا ہوگا؟
کیا یہ سفر لا حاصل ہے؟
بے منزل ہے؟
اور یہ زندگی ۔۔ بے مقصد؟
یہ صبح کا انتظار،
جو شاید طلوع ہو ۔۔۔
یا پھر
کبھی نہیں ؟
لیکن!
لیکن امید۔۔۔
ہاں امید ئ ِ صبح تو بر حق ہے
اور مایوسی گناہ ۔۔
جستجو کر لیں تو کیا ممکن نہیں۔۔۔
مقصد بھی مل جائے گی ،
اور منزل بھی
بس اُس رب سے التجا ہے
اُس منزل کو پانے کے بعد
غموں کا سود نہ دینا پڑے
اور آسودگی ہمارا مقدر ہو۔۔
اور پھر کوئی راہ نا پر خطر ہو ۔۔
اور انجامِ سفر بخیر ہو۔۔۔
آمین
مھرءِ ھمبراہ دردءُ غم ھور اَنت چیا ؟
عشق شرکن اِنت چمءِ اَرس سور اَنت چیا ؟